“..وَأَقِيمُوا الصَّلَاةَ..”

واشنگٹن میں ایک ڈاکٹر تھا۔ وہ کہتا تھا کہ :

” میرا دل کرتا ہے کہ سارے ملک میں نماز کو لاگو کر دوں …”

پوچھا :

” کیوں …؟ “

کہنے لگا :

” اس کے اندر اتنی حکمتیں ہیں کہ کوئی حد نہیں ہے … “

وہ جلد کا اسپیشلسٹ تھا۔ مجھ سے کہنے لگا:

” اس کی حکمت آپ تو (انجینیئر ہیں) سمجھ لیں گے۔ کہنے لگا! کہ اگر انسان کے جسم کو مادی نظر سے دیکھا جائے، تو انسان کا دل پمپ کی مانند اس کا ان پٹ بھی ہے اور آؤٹ پٹ بھی۔ سارے جسم میں تازہ خون جا رہا ہوتا ہے اور دوسرا واپس آ رہا ہوتا ہے … “

اس نے مزید کہا کہ :

” جب انسان بیٹھا ہوتا ہے یا کھڑا ہوتا ہے تو جسم کے جو حصے نیچے ہوتے ہیں ان میں پریشر نسبتا زیادہ ہوتا ہے اور جو حصے اوپر ہوتے ہیں ان میں پریشر نسبتا کم ہوتا ہے۔مثلا تین منزلہ عمارت ہو اور نیچے پمپ لگا ہوا ہو تو نیچے پانی زیادہ ہو گا اور دوسری منزل پر بھی کچھ پانی پہنچ جائے گا ۔ جبکہ تیسری منزل پر تو بلکل نہیں پہنچے گا۔ حالانکہ وہ ہی پمپ ہے۔ لیکن نیچے پورا پانی دے رہا ہے اس سے اوپر والی منزل میں کچھ پانی دے رہا ہے اور سب سے اوپر والی منزل پر تو بلکل پانی نہیں جا رہا۔ اس مثال کو اگر سامنے رکھتے ہوئے سوچیں تو انسان کا دل خون کو پمپ کر رہا ہوتا ہے اور یہ خون نیچے کے اعضاء میں بلکل پہنچ رہا ہوتا ہے، لیکن اوپر کے اعضاء میں اتنا نہیں پہنچ رہا ہوتا۔ جب کوئی ایسی صورت آتی ہے کہ انسان کا سر نیچے ہوتا ہے اور دل اوپر ہوتا ہے تو خون سر کے اندر بھی اچھی طرح پہنچ جاتا ہے۔ مثلا جب انسان نماز کے سجدے میں جاتا ہےتو محسوس ہوتا ہے جیسے گویا پورے جسم میں خون پھر گیا ہے۔ آدمی سجدہ تھوڑا لمبا کر لے تو محسوس ہوتا ہے کہ چہرے کی جو باریک باریک شریانیں ہیں ان میں بھی خون پہنچ گیا ہے۔ عام طور پر انسان بیٹھا، لیٹا یا کھڑا ہوتا ہے۔ بیٹھنے ، کھڑے ہونے اور لیٹنے سے انسان کا دل نیچے ہوتا ہے جبکہ سر اوپر ہوتا ہے۔ ایک ہی صورت ایسی ہے کہ نماز میں جب انسان سجدے میں جاتا ہے تو اس کا دل اوپر ہوتا ہےاور سر نیچے ہوتا ہے۔ لہذا خون اچھی طرح چہرے کی جلد میں پہنچ جاتا ہے … “

اس کی یہ باتیں سن کر بے اختیار سبحان اللہ نکلا اور میں نے اللہ کا شکر ادا کیا کہ اس نے مجھے کتنا پیارا دین دیا ہے جس کے ایک ایک عمل کی تعریف آج کی سائنس اور علم جدید بھی کرتا ہے …

       ” وَأَقِيمُوا الصَّلَاةَ وَآتُوا الزَّكَاةَ وَارْكَعُوا مَعَ الرَّاكِعِينَ “

” اور نماز پڑھا کرو اور زکوٰة دیا کرو اور (خدا کے آگے) جھکنے والوں کے ساتھ جھکا کرو … “

” وَاسْتَعِينُوا بِالصَّبْرِ وَالصَّلَاةِ ۚ وَإِنَّهَا لَكَبِيرَةٌ إِلَّا عَلَى الْخَاشِعِينَ “

” اور (رنج وتکلیف میں) صبر اور نماز سے مدد لیا کرو اور بے شک نماز گراں ہے، مگر ان لوگوں پر (گراں نہیں) جو عجز کرنے والے ہیں … “

            ” يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اذْكُرُوا اللَّهَ ذِكْرًا كَثِيرًا “

             ” اے اہل ایمان خدا کا بہت ذکر کیا کرو “

                        ” وَسَبِّحُوهُ بُكْرَةً وَأَصِيلًا “

       ” اور صبح اور شام اس کی پاکی بیان کرتے رہو “

” إِنَّمَا يَعْمُرُ مَسَاجِدَ اللَّهِ مَنْ آمَنَ بِاللَّهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ وَأَقَامَ الصَّلَاةَ وَآتَى الزَّكَاةَ وَلَمْ يَخْشَ إِلَّا اللَّهَ ۖ فَعَسَىٰ أُولَٰئِكَ أَنْ يَكُونُوا مِنَ الْمُهْتَدِينَ “

” خدا کی مسجدوں کو تو وہ لوگ آباد کرتے ہیں جو خدا پر اور روز قیامت پر ایمان لاتے ہیں اور نماز پڑھتے اور زکواة دیتے ہیں اور خدا کے سوا کسی سے نہیں ڈرتے۔ یہی لوگ امید ہے کہ ہدایت یافتہ لوگوں میں (داخل) ہوں … “

اللہ تعالٰی مجھ گناہ گار و بےعمل انسان سمیت ہم تمام مسلمانان عالم کو پنجگانہ نماز کی ادائیگی تاحیات سعادت نصیب فرماتے ہوئے عین صراط مستقیم پر چلنے کی کامل توفیق عطا فرمائے، آمین ثم آمیــــــــــــــن !یارب العالمین

 

 

Advertisements

They Say…

To them its just a story,

Another of its kind.

To polish another crude soul,

To mend ones broken behind.
To them it is necessary

Stating facts, emotions and fears.

What could they merely talk about?

What could they possibly hear?
They say, “you’re one of a kind

A  winner, not victim for God sakes!”

Would they know what to endure?

What it went through, what it takes?
Go tell them story, what you bury within

A mirrored reflection, a memory secured,

An engraved thought of hard struggle,

Those years of passion that you endured.
Go tell them- you’re the real hero,

Not their sweet smiles or random talk

Neither their mere support- the less that it was,

Nor the evenings they hardly walk. 
You’re the hero. Believe and foresee,

What lies behind was a mere memory,

Fading in its faintest glow very slowly,

Deeply.. Softly… And Eventually.  

Undercover.

We’re all shape-shifters. To this day I’ve come to believe what is apparent may not be truly what lies beneath the hidden face. People hide emotions. They may be targets of life’s complexities yet they’re good treasure chest for secrets. For an example, people become unavoidably sarcastic- merely taunting and teasing and often gaining attention. To a limit, its fine.. They think its fun.. How the daily replies dies with words being limited as if hiding something for no reason. Reason? Often unknown to them too.. But its just their way of hiding a serious life. 

Then come those who talk. Not just random talk… Literally every kind of talk. Necessary or unnecessary, serious or funny, philosophy or literature, science or math- they just talk! You name it, they know it. They also gain huge circle of friends and hardly lose any. You often get such positive vibes from such people.. But don’t get trap. Again, such is their way of showing a brighter side of life. 

Another form is of those who demand praises yet love merely point fingers upon others.. Their best habit? Let’s gossip. Just gossip and kill the time. They’ll show the best behaviour when you’re in talking terms- if you doubt them th-  Oohh you shouldn’t doubt them- how dare you point finger at them?! Did you just see that? How rude. Tsk tsk. 

Also those who are in search of sincerity, often when you sincerely give an advice- they mind alot. What are you good at then ? 

Often bipolars are found. Two poles yes, one for a sober friend and one for a serious friend. You may never unveil their true personality.. For they show a different kind whenever you meet. Good with everyone but never revealing or trusting those they call “friends”.. Probably because they hardly have any. 

There are also extremes- some who like to play hide and seek like they keep their plans a secret till you discover yourself OR they eventually inform at the 11th hour. Or there are those who inform you of every breath they’re about to take but still never take your plans seriously. Annoying.

I’ve seen people asking the very details of every little plan you discuss, yet hiding their own…. Seen those who become softest in their tone when actually they’re raging with fire… And those who love to travel and eat outside almost daily to runaway from serious home life… And those who assume their life is just friends, phone and social media… And those who are laughing with tears in their eyes, ‘tears of happiness!’ .. Still these all have a life. The world within them remains hidden and confused even to them at times.. This is what they face from their perspective and become a shape shifter to the world outside. cover and undiscovered. 

The Dam .. 

Sharing is caring? We often bury our secrets to what seem a deep chest with a never opening lock- so enduring that its impossible to believe it can ever break open. We also bury a part of ourselves. Expecting the treasure chest would never be found by the dishonest pirates. Expecting to get a guide. Believing our secret is considered not a drop in the ocean, but a pearl hidden within its vastness. But we expect too much…

Anyone with such a deep sense of trust is hard to find. In a world of today, if a person bears witness of showing themselves so honest- trust me its a warning! If a person starts to compliment you in an exaggerated way, be vigilant for there’s a purpose behind it. The moment their work is done, you’ve become useless to them. People become so bias and so immature, sometimes its hard to believe they have more experience in life than we’ve had uptill now. Gradually it becomes a stubborn habit. The habit of pleasing everyone, showing “we care” “we support” “we’re here”, pretending dual characters, never giving a sincere opinion and taking relations for granted… Wow, they don’t even get tired! 

… It’s also a part of the society that broughts up.  Probably of the busy life and frustrated surroundings. Not only the professions, but the corruption, the exaggeration in media and the social networks proves we are living a techno robotic life.. Where we expect a reply or a solution to our problems almost instantly.

…People have failed to realise they possess a dam within themselves. It may contain infinite memories, a tonne of trust and a billion of secrets. Its a matter of realization how deep the dam maybe, or a matter of choice how deep you want it to be. Either you chose the superficial land beside where everything is open for everyone to come and see and enjoy ..or you chose to be the deepness of trust where looking from above makes you wonder what lies beneath.. There shouldn’t be anything gray…


 

جاد اللہ القرآنی

​یہ تقریباً 1957ء کی بات ہے، کہ فرانس میں کہیں ایک رہائشی عمارت کی نکڑ میں ترکی کے ایک پچاس سالہ بوڑھے آدمی نے چھوٹی سی دکان بنا رکھی تھی۔ اردگرد کے لوگ اس بوڑھے کو “انکل ابراہیم” کے نام سے جانتے اور پکارتے تھے۔ انکل ابراہیم کی دکان میں چھوٹی موٹی گھریلو ضروریات کی اشیاء کے علاوہ بچوں کیلئے چاکلیٹ، آئسکریم اور گولیاں، ٹافیاں دستیاب تھیں …!
اسی عمارت کی ایک منزل پر ایک یہودی خاندان آباد تھا جن کا ایک سات سالہ بچہ (جاد) تھا۔ جاد تقریباً روزانہ ہی انکل ابراہیم کی دکان پر گھر کی چھوٹی موٹی ضروریات خریدنے کیلئے آتا تھا۔ دکان سے جاتے ہوئے انکل ابراہیم کو کسی اور کام میں مشغول پا کر جاد نے کبھی بھی ایک چاکلیٹ چوری کرنا نہ بھولی تھی، ایک بار جاد دکان سے جاتے ہوئے چاکلیٹ چوری کرنا بھول گیا۔ انکل ابراہیم نے جاد کو پیچھے سے آواز دیتے ہوئے کہا :

” جاد …! آج چاکلیٹ نہیں اُٹھاؤ گے کیا …؟ ”

انکل ابراہیم نے یہ بات محبت میں کی تھی یا دوستی سے مگر جاد کیلئے ایک صدمے سے بڑھ کر تھی۔ جاد آج تک یہی سمجھتا تھا کہ اس کی چوری ایک راز تھی مگر معاملہ اس کے برعکس تھا۔ جاد نے گڑگڑاتے ہوئے انکل ابراہیم سے کہا کہ :

” آپ اگر مجھے معاف کر دیں، تو آئندہ وہ کبھی بھی چوری نہیں کروں گا ”
مگر انکل ابراہیم نے جاد سے کہا : 

“اگر تم وعدہ کرو کہ اپنی زندگی میں کبھی بھی کسی کی چوری نہیں کرو گے تو روزانہ کا ایک چاکلیٹ میری طرف سے تمہارا ہوا، ہر بار دکان سے جاتے ہوئے لے جایا کرنا۔”

اور بالآخر اسی بات پر جاد اور انکل کا اتفاق ہو گیا …!
وقت گزرتا گیا اور اس یہودی بچے جاد اور انکل ابراہیم کی محبت گہری سے گہری ہوتی چلی گئی۔ بلکہ ایسا ہو گیا کہ انکل ابراہیم ہی جاد کیلئے باپ، ماں اور دوست کا درجہ اختیار کر چکا تھا۔ جاد کو جب کبھی کسی مسئلے کا سامنا ہوتا یا پریشانی ہوتی تو انکل ابراہیم سے ہی کہتا، ایسے میں انکل میز کی دراز سے ایک کتاب نکالتے اور جاد سے کہتے کہ کتاب کو کہیں سے بھی کھول کر دو۔ جاد کتاب کھولتا اور انکل وہیں سے دو صفحے پڑھتے، جاد کو مسئلے کا حل بتاتے، جاد کا دل اطمینان پاتا اور وہ گھر کو چلا جاتا …!
اور اسی طرح ایک کے بعد ایک کرتے سترہ سال گزر گئے۔ سترہ سال کے بعد جب جاد چوبیس سال کا ایک نوجون بنا تو انکل ابرہیم بھی اس حساب سے سڑسٹھ سال کے ہوچکا تھے ۔ داعی اجل کا بلاوا آیا اور انکل ابراہیم وفات پا گئے …!
اُنہوں نے اپنے بیٹوں کے پاس جاد کیلئے ایک صندوقچی چھوڑی تھی، اُن کی وصیت تھی کہ :

” اس کے مرنے کے بعد یہ صندوقچی اس یہودی نوجوان جاد کو تحفہ میں دیدی جائے …! ”
جاد کو جب انکل کے بیٹوں نے صندوقچی دی اور اپنے والد کے مرنے کا بتایا تو جاد بہت غمگین ہوا، کیونکہ انکل ہی تو اسکے غمگسار اور مونس تھے۔ جاد نے صندوقچی کھول کر دیکھی تو اندر وہی کتاب تھی جسے کھول کر وہ انکل کو دیا کرتا تھا …!
جاد، انکل کی نشانی گھر میں رکھ کر دوسرے کاموں میں مشغول ہو گیا۔ مگر ایک دن اُسے کسی پریشانی نے آ گھیرا، “آج انکل ہوتے تو وہ اُسے کتاب کھول کر دو صفحے پڑھتے اور مسئلے کا حل سامنے آجاتا” جاد کے ذہن میں انکل کا خیال آیا اور اُس کے آنسوؤں نکل آئے …!
“کیوں ناں آج میں خود کوشش کروں …!” 

کتاب کھولتے ہوئے وہ اپنے آپ سے مخاطب ہوا، لیکن کتاب کی زبان اور لکھائی اُس کی سمجھ سے بالاتر تھی۔ کتاب اُٹھا کر اپنے تیونسی عرب دوست کے پاس گیا اور اُسے کہا کہ :

” مجھے اس میں سے دو صفحے پڑھ کر سناؤ ”
مطلب پوچھا اور اپنے مسئلے کا اپنے تئیں حل نکالا۔ واپس جانے سے پہلے اُس نے اپنے دوست سے پوچھا :

” یہ کیسی کتاب ہے …؟”
تیونسی نے کہا :

” یہ ہم مسلمانوں کی کتاب قرآن ہے …! ”
جاد نے پوچھا :

” مسلمان کیسے بنتے ہیں …؟ ”
تیونسی نے کہا :

” کلمہ شہادت پڑھتے ہیں اور پھر شریعت پر عمل کرتے ہیں …! ”
جاد نے کہا : 

” تو پھر سن لو میں کہہ رہا ہوں أَشْهَدُ أَنّ لَّا إِلَٰهَ إِلَّإ الله و أَشْهَدُ ان محمد رسول الله …! ”
جاد مسلمان ہو گیا اور اپنے لئے “جاد اللہ القرآنی” کا نام پسند کیا۔ نام کا اختیار اس کی قرآن سے والہانہ محبت کا کھلا ثبوت تھا۔ جاد اللہ نے قرآن کی تعلیم حاصل کی، دین کو سمجھا اور اور اس کی تبلیغ شروع کی …!
یورپ میں اس کے ہاتھ پر چھ ہزار سے زیادہ لوگوں نے اسلام قبل کیا۔ ایک دن پرانے کاغذات دیکھتے ہوئے جاد اللہ کو انکل ابراہیم کے دیئے ہوئے قرآن میں دنیا کا ایک نقشہ نظر آیا جس میں براعظم افریقہ کے اردگرد لکیر کھینچی ہوئی تھی اور انکل کے دستخط کیے ہوئے تھے۔ ساتھ میں انکل کے ہاتھ سے ہی یہ آیت کریمہ لکھی ہوئی تھی:

” ادع إلى سبيل ربك بالحكمة والموعظة الحسنة ”

” اپنے رب کے راستے کی طرف دعوت دو حکمت اور عمدہ نصیحت کے ساتھ …! ”
جاد اللہ کو ایسا لگا جیسے یہ انکل کی اس کیلئے وصیت ہو۔ اور اسی وقت جاد اللہ نے اس وصیت پر عمل کرنے کی ٹھانی، اور ساتھ ہی جاد اللہ نے یورپ کو خیرباد کہہ کر کینیا، سوڈان، یوگنڈہ اور اس کے آس پاس کے ممالک کو اپنا مسکن بنایا، دعوت حق کیلئے ہر مشکل اور پرخطر راستے پر چلنے سے نہ ہچکچایا اور اللہ تعالیٰ نے اس کے ہاتھوں ساٹھ لاکھ انسانوں کو دین اسلام کی روشنی سے نوازا …!
جاد اللہ نے افریقہ کے کٹھن ماحول میں اپنی زندگی کے تیس سال گزار دیئے۔ سن 2003ء میں افریقہ میں پائی جانے والی بیماریوں میں گھر کر محض چوئن سال کی عمر میں اپنے خالق حقیقی کو جا ملے …!
جاد اللہ کی محنت کے ثمرات ان کی وفات کے بعد بھی جاری رہے۔ وفات کے ٹھیک دو سال بعد ان کی ماں نے ستر سال کی عمر میں اسلام قبول کیا …!
جاد اللہ اکثر یاد کیا کرتے تھے کہ انکل ابراہیم نے اس کے سترہ سالوں میں کبھی بھی اسے غیر مسلم محسوس نہیں ہونے دیا اور نہ ہی کبھی کہا کہ اسلام قبول کر لو۔ مگر اس کا رویہ ایسا تھا کہ جاد کا اسلام قبول کیئے بغیر چارہ نہ تھا  …!
 آپ کے سامنے اس واقعے کے بیان کرنے کا فقط اتنا مقصد ہے کہ، کیا مجھ سمیت ہم میں سے کسی مسلمان کا اخلاق و عادات و اطوار و کردار ” انکل_ابراہیم “جیسا ہے کہ کوئی غیر مسلم جاد ہم سے متاثر ہو کر ” جاد_اللہ_القرآنی ” بن کر میرے مذہب اسلام کی اس عمدہ طریقے سے خدمت کر سکے …
اللہ تعالٰی مجھ گناہ گار و سیاہ کار سمیت ہم سب مسلمانان عالم پر بےحد رحم فرمائے اور عین صراط مستقیم پر چلنے کی کامل توفیق عطا فرمائے …!
دوستوں چلتے، چلتے ہمیشہ کی طرح وہ ہی ایک آخری بات عرض کرتا چلوں کے اگر کبھی کوئی ویڈیو، قول، واقعہ، کہانی یا تحریر وغیرہ اچھی لگا کرئے تو مطالعہ کے بعد مزید تھوڑی سے زحمت فرما کر اپنے دوستوں سے بھی شئیر کر لیا کیجئے، یقین کیجئے کہ اس میں آپ کا بمشکل ایک لمحہ صرف ہو گا لیکن ہو سکتا ہے کہ، اس ایک لمحہ کی اٹھائی ہوئی تکلیف سے آپ کی شیئر کردا تحریر ہزاروں لوگوں کے لیے سبق آموز ثابت ہو ….!

The Three Letters of Downfall

What defines “the chaos of life”? You being so busy that you’re unable to take out time to sit with family? Your stubbornness when a junior asks you for a favour ? Your frustrations when little things you think you can manage gets so haphazard? Eventually, it leads all to an ultimate end of a good brought up or should I say the grooming of your parents when you start boasting your ego. The three letter word that leads us all to downfall, little do we understand don’t we?

Man, no doubt has to some extent a superiority over women. They earn and face the excruciating and disgusting world outside. Running for jobs, dealing with gruesome people and above all trying to save money in a world of today- where it seems the money gets down the drain so quickly no matter how you save. They are tough and brought up by the stereotype, ‘men don’t cry’.  That’s exactly where the EGO steps in. 

Women look after household and some even work and do chores too. And by chores I could go on in a list of never ending work. Make dinner of their husband’s choice, wash clothes, clean the house, do the dishes, solve inlaws issues,  then they have the cranky dependant babies to look after.. And still remain tip top for their husbands in the eve. Some are even working women who do double jobs of balancing the outside and inside world together. If she demands some time to rest is it necessary she gets taunted in a way she never want to do anything for her sake? 

Why does ego gets misunderstood as “confidence” “power to rule” and “intelligent dealings”. Is it important we crush the one beneath us so harshly, forget about hurting the other person won’t even want to talk to you. Ever realized why you were made an authority? Was it to rule over and gain power by insulting? Doesn’t it lead to more frustrations in a society- eventually a working space gets disintegrated and the blame games start. The vicious cycle begins where two personalities full of pride fail to understand their ruining the world in small or a larger scale on whole. 

I know frustrations are everywhere, there are little who know how to deal with them perfectly and wisely. I love such people and always try to learn from such kinds who put others first and not their wishes ahead of themselves. The teachings of our Prophet (S.A.W. W) show that he practised his life that revolves around the famous quote, ” forgive and let go” trust me, its so not easy in this world we live now. Now is the life with which even the wolf has asked forgiveness. People are after the happiness you share, the pride you show when your child achieves higher marks in class, the confidence you feel when you show you’re independent. They would never stop, why? Because you’re hurting them. Affecting their “look busy, do nothing” lives and teasing their ego. Trust me, you shouldn’t stop, its their sickening thoughts with which they’re brought up. Ego. They think its their win-win, but it’s actually yours if you ponder and let them go- remember karma? It lies there hiding and waiting for the right moment to come. And it will, inshaaAllah.