Month: September 2016

الله راذق 

fatawakkal-alallahپاکستان بننے سے قبل سندھ کے ایک قدیمی شہر میں ایک حکیم صاحب ہوا کرتے تھے، جن کا مطب ایک پرانی سی عمارت میں ہوتا تھا۔حکیم صاحب روزانہ صبح مطب جانے سے قبل بیوی کو کہتے کہ جو کچھ آج کے دن کے لیے تم کو درکار ہے ایک چٹ پر لکھ کر دے دو۔ بیوی لکھ کر دے دیتی۔ آپ دکان پر آ کر سب سے پہلے وہ چٹ کھولتے۔ بیوی نے جو چیزیں لکھی ہوتیں۔ اُن کے سامنے اُن چیزوں کی قیمت درج کرتے، پھر اُن کا ٹوٹل کرتے۔ پھر اللہ سے دعا کرتے کہ یااللہ! میں صرف تیرے ہی حکم کی تعمیل میں تیری عبادت چھوڑ کر یہاں دنیا داری کے چکروں میں آ بیٹھا ہوں۔ جوں ہی تو میری آج کی مطلوبہ رقم کا بندوبست کر دے گا۔ میں اُسی وقت یہاں سے اُٹھ جائوں گا اور پھر یہی ہوتا۔ کبھی صبح کے ساڑھے نو، کبھی دس بجے حکیم صاحب مریضوں سے فارغ ہو کر واپس اپنے گائوں چلے جاتے۔

ایک دن حکیم صاحب نے دکان کھولی۔ رقم کا حساب لگانے کے لیے چِٹ کھولی تو وہ چِٹ کو دیکھتے کے دیکھتے ہی رہ گئے۔ ایک مرتبہ تو ان کا دماغ گھوم گیا۔ اُن کو اپنی آنکھوں کے سامنے تارے چمکتے ہوئے نظر آ رہے تھے لیکن جلد ہی انھوں نے اپنے اعصاب پر قابو پا لیا۔ آٹے دال وغیرہ کے بعد بیگم نے لکھا تھا، بیٹی کے جہیز کا سامان۔ کچھ دیر سوچتے رہے پھر باقی چیزوں کی قیمت لکھنے کے بعد جہیز کے سامنے لکھا ’’یہ اللہ کا کام ہے اللہ جانے۔‘‘

ایک دو مریض آئے ہوئے تھے۔ اُن کو حکیم صاحب دوائی دے رہے تھے۔ اسی دوران ایک بڑی سی کار اُن کے مطب کے سامنے آ کر رکی۔ حکیم صاحب نے کار یا صاحبِ کار کو کوئی خاص توجہ نہ دی کیونکہ کئی کاروں والے ان کے پاس آتے رہتے تھے۔

دونوں مریض دوائی لے کر چلے گئے۔ وہ سوٹڈبوٹڈ صاحب کار سے باہر نکلے اور سلام کرکے بنچ پر بیٹھ گئے۔ حکیم صاحب نے کہا کہ اگر آپ نے اپنے لیے دوائی لینی ہے تو ادھر سٹول پر آجائیں تاکہ میں آپ کی نبض دیکھ لوں اور اگر کسی مریض کی دوائی لے کر جانی ہے تو بیماری کی کیفیت بیان کریں۔

وہ صاحب کہنے لگے حکیم صاحب میرا خیال ہے آپ نے مجھے پہچانا نہیں۔ لیکن آپ مجھے پہچان بھی کیسے سکتے ہیں؟ کیونکہ میں ۱۵، ۱۶ سال بعد آپ کے مطب میں داخل ہوا ہوں۔ آپ کو گزشتہ ملاقات کا احوال سناتا ہوں پھر آپ کو ساری بات یاد آجائے گی۔ جب میں پہلی مرتبہ یہاں آیا تھا تو وہ میں خود نہیں آیا تھا۔ خدا مجھے آپ کے پاس لے آیا تھا کیونکہ خدا کو مجھ پر رحم آگیا تھا اور وہ میرا گھر آباد کرنا چاہتا تھا۔ ہوا اس طرح تھا کہ میں لاہور سے میرپور اپنی کار میں اپنے آبائی گھر جا رہا تھا۔ عین آپ کی دکان کے سامنے ہماری کار پنکچر ہو گئی۔

ڈرائیور کار کا پہیہ اتار کر پنکچر لگوانے چلا گیا۔ آپ نے دیکھا کہ میں گرمی میں کار کے پاس کھڑا ہوں۔ آپ میرے پاس آئے اور آپ نے مطب کی طرف اشارہ کیا اور کہا کہ ادھر آ کر کرسی پر بیٹھ جائیں۔ اندھا کیا چاہے دو آنکھیں۔ میں نے آپ کا شکریہ ادا کیا اور کرسی پر آ کر بیٹھ گیا۔

ڈرائیور نے کچھ زیادہ ہی دیر لگا دی تھی۔ ایک چھوٹی سی بچی بھی یہاں آپ کی میز کے پاس کھڑی تھی اور بار بار کہہ رہی تھی ’’چلیں ناں، مجھے بھوک لگی ہے۔ آپ اُسے کہہ رہے تھے بیٹی تھوڑا صبر کرو ابھی چلتے ہیں۔

میں نے یہ سوچ کر کہ اتنی دیر سے آپ کے پاس بیٹھا ہوں۔ مجھے کوئی دوائی آپ سے خریدنی چاہیے تاکہ آپ میرے بیٹھنے کو زیادہ محسوس نہ کریں۔ میں نے کہا حکیم صاحب میں ۵،۶ سال سے انگلینڈ میں ہوتا ہوں۔ انگلینڈ جانے سے قبل میری شادی ہو گئی تھی لیکن ابھی تک اولاد کی نعمت سے محروم ہوں۔ یہاں بھی بہت علاج کیا اور وہاں انگلینڈ میں بھی لیکن ابھی قسمت میں مایوسی کے سوا اور کچھ نہیں دیکھا۔

آپ نے کہا میرے بھائی! توبہ استغفار پڑھو۔ خدارا اپنے خدا سے مایوس نہ ہو۔ یاد رکھو! اُس کے خزانے میں کسی شے کی کمی نہیں۔ اولاد، مال و اسباب اور غمی خوشی، زندگی موت ہر چیز اُسی کے ہاتھ میں ہے۔ کسی حکیم یا ڈاکٹر کے ہاتھ میں شفا نہیں ہوتی اور نہ ہی کسی دوا میں شفا ہوتی ہے۔ شفا اگر ہونی ہے تو اللہ کے حکم سے ہونی ہے۔ اولاد دینی ہے تو اُسی نے دینی ہے۔

مجھے یاد ہے آپ باتیں کرتے جا رہے اور ساتھ ساتھ پڑیاں بنا رہے تھے۔ تمام دوائیاں آپ نے ۲ حصوں میں تقسیم کر کے ۲ لفافوں میں ڈالیں۔ پھر مجھ سے پوچھا کہ آپ کا نام کیا ہے؟ میں نے بتایا کہ میرا نام محمد علی ہے۔ آپ نے ایک لفافہ پر محمدعلی اور دوسرے پر بیگم محمدعلی لکھا۔ پھر دونوں لفافے ایک بڑے لفافہ میں ڈال کر دوائی استعمال کرنے کا طریقہ بتایا۔ میں نے بے دلی سے دوائی لے لی کیونکہ میں تو صرف کچھ رقم آپ کو دینا چاہتا تھا۔ لیکن جب دوائی لینے کے بعد میں نے پوچھا کتنے پیسے؟ آپ نے کہا بس ٹھیک ہے۔ میں نے زیادہ زور ڈالا، تو آپ نے کہا کہ آج کا کھاتہ بند ہو گیا ہے۔

میں نے کہا مجھے آپ کی بات سمجھ نہیں آئی۔ اسی دوران وہاں ایک اور آدمی آچکا تھا۔ اُس نے مجھے بتایا کہ کھاتہ بند ہونے کا مطلب یہ ہے کہ آج کے گھریلو اخراجات کے لیے جتنی رقم حکیم صاحب نے اللہ سے مانگی تھی وہ اللہ نے دے دی ہے۔ مزید رقم وہ نہیں لے سکتے۔ میں کچھ حیران ہوا اور کچھ دل میں شرمندہ ہوا کہ میرے کتنے گھٹیا خیالات تھے اور یہ سادہ سا حکیم کتنا عظیم انسان ہے۔ میں نے جب گھر جا کربیوی کو دوائیاں دکھائیں اور ساری بات بتائی تو بے اختیار اُس کے منہ سے نکلا وہ انسان نہیں کوئی فرشتہ ہے اور اُس کی دی ہوئی ادویات ہمارے من کی مراد پوری کرنے کا باعث بنیں گی۔ حکیم صاحب آج میرے گھر میں تین پھول اپنی بہار دکھا رہے ہیں۔

ہم میاں بیوی ہر وقت آپ کے لیے دعائیں کرتے رہتے ہیں۔ جب بھی پاکستان چھٹی آیا۔ کار اِدھر روکی لیکن دکان کو بند پایا۔ میں کل دوپہر بھی آیا تھا۔ آپ کا مطب بند تھا۔ ایک آدمی پاس ہی کھڑا ہوا تھا۔ اُس نے کہا کہ اگر آپ کو حکیم صاحب سے ملنا ہے تو آپ صبح ۹ بجے لازماً پہنچ جائیں ورنہ اُن کے ملنے کی کوئی گارنٹی نہیں۔ اس لیے آج میں سویرے سویرے آپ کے پاس آگیا ہوں۔

محمدعلی نے کہا کہ جب ۱۵ سال قبل میں نے یہاں آپ کے مطب میں آپ کی چھوٹی سی بیٹی دیکھی تھی تو میں نے بتایا تھا کہ اس کو دیکھ کر مجھے اپنی بھانجی یاد آرہی ہے۔

حکیم صاحب ہمارا سارا خاندان انگلینڈ سیٹل ہو چکا ہے۔ صرف ہماری ایک بیوہ بہن اپنی بیٹی کے ساتھ پاکستان میں رہتی ہے۔ ہماری بھانجی کی شادی اس ماہ کی ۲۱ تاریخ کو ہونا تھی۔ اس بھانجی کی شادی کا سارا خرچ میں نے اپنے ذمہ لیا تھا۔ ۱۰ دن قبل اسی کار میں اسے میں نے لاہور اپنے رشتہ داروں کے پاس بھیجا کہ شادی کے لیے اپنی مرضی کی جو چیز چاہے خرید لے۔ اسے لاہور جاتے ہی بخار ہوگیا لیکن اس نے کسی کو نہ بتایا۔ بخار کی گولیاں ڈسپرین وغیرہ کھاتی اور بازاروں میں پھرتی رہی۔ بازار میں پھرتے پھرتے اچانک بے ہوش ہو کر گری۔ وہاں سے اسے ہسپتال لے گئے۔ وہاں جا کر معلوم ہوا کہ اس کو ۱۰۶ ڈگری بخار ہے اور یہ گردن توڑ بخار ہے۔ وہ بے ہوشی کے عالم ہی میں اس جہانِ فانی سے کوچ کر گئی۔

اُس کے فوت ہوتے ہی نجانے کیوں مجھے اور میری بیوی کو آپ کی بیٹی کا خیال آیا۔ ہم میاں بیوی نے اور ہماری تمام فیملی نے فیصلہ کیا ہے کہ ہم اپنی بھانجی کا تمام جہیز کا سامان آپ کے ہاں پہنچا دیں گے۔ شادی جلد ہو تو اس کا بندوبست خود کریں گے اور اگر ابھی کچھ دیر ہے تو تمام اخراجات کے لیے رقم آپ کو نقد پہنچا دیں گے۔ آپ نے ناں نہیں کرنی۔ آپ اپنا گھر دکھا دیں تاکہ سامان کا ٹرک وہاں پہنچایا جا سکے۔

حکیم صاحب حیران و پریشان یوں گویا ہوئے ’’محمدعلی صاحب آپ جو کچھ کہہ رہے ہیں مجھے سمجھ نہیں آرہا، میرا اتنا دماغ نہیں ہے۔ میں نے تو آج صبح جب بیوی کے ہاتھ کی لکھی ہوئی چِٹ یہاں آ کر کھول کر دیکھی تو مرچ مسالہ کے بعد جب میں نے یہ الفاظ پڑھے ’’بیٹی کے جہیز کا سامان‘‘ تو آپ کو معلوم ہے میں نے کیا لکھا۔ آپ خود یہ چِٹ ذرا دیکھیں۔ محمدعلی صاحب یہ دیکھ کر حیران رہ گئے کہ ’’بیٹی کے جہیز‘‘ کے سامنے لکھا ہوا تھا ’’یہ کام اللہ کا ہے، اللہ جانے۔‘‘

محمد علی صاحب یقین کریں، آج تک کبھی ایسا نہیں ہوا تھا کہ بیوی نے چِٹ پر چیز لکھی ہو اور مولا نے اُس کا اسی دن بندوبست نہ کردیا ہو۔ واہ مولا واہ۔ تو عظیم ہے تو کریم ہے۔ آپ کی بھانجی کی وفات کا صدمہ ہے لیکن اُس کی قدرت پر حیران ہوں کہ وہ کس طرح اپنے معجزے دکھاتا ہے۔

حکیم صاحب نے کہا جب سے ہوش سنبھالا ایک سبق پڑھا کہ صبح ورد کرنا ہے ’’رازق، رازق، تو ہی رازق‘‘ اور شام کو ’’شکر، شکر مولا تیرا شکر۔‘‘

Advertisements

Reflect before speaking

“When a glass is broken, the sound of breaking disappears immediately whereas the glass pieces are scattered over the ground hurting whoever walks over it”.
Similarly, “when you say something that hurts people’s emotions and feelings,the voice disappears immediately but the heart remains in pain for long”.
Therefore, don’t say anything except good and remember always the nine advises and prohibitions that Allah Almighty gave us in Suratul Hujurat (The Sura of Islamic manners) before you say something to anyone:

1- فتبينوا:

“Fa Tabayyanu”: Investigate: when you receive an information,lest you harm people out of ignorance.
2 – فأصلحوا:

“Fa Aslihu”

Make settlement: between your brothers as believers are brothers.
3- وأقسطوا:

“Wa Aqsidu”: Act justly: whenever there is a dispute try for settlement and act justly among both parties as Allah loves those who act justly.
4 – لا يسخر:

“La Yaskhar”: Don’t ridicule people,perhaps they may be better than you to Allah. 
5 – ولا تلمزوا:

“Wa La Talmizu”: Do not insult one another.
 6- ولا تنابزوا:

“Wa La Tanabazu”: Do not call each other with offensive nicknames. 
7- اجتنبوا كثيرا من الظن:

“Ijtanibu Kaseeran min AlZan”: Avoid negative assumptions, indeed some of the assumptions are sins.
8 – ولا تجسسوا:

“Wa La Tajassasu” Do not spy on each other.
9- ولا يغتب بعضكم بعضا:

“Wa La Yagtab”: Do not backbite each other. Its a major sin equivalent to eating your dead brother’s flesh.
Lastly Allah said in Qur’an “remind for the remainder benefits the believers”.

May Allah continue to Bless and guide us in all our affairs. Aameen.

A Walk to Remember..

It is said that when you stand in front of the ocean, the first person that comes to your mind is your true love, but what if I tell you that its vicinity may become secretly inspiring for different people. Beaches are adventurous for those who wish to look beyond the water merely colliding with the shores, passions for the shells, sun bathing and animal riding.

 

seashells
The water that voluntarily thrashes itself on the rocks may be a teacher for the poetic beginners .. waking up to its beautiful sound may become anti-depressants for the lonely souls.. even the way water meets the shore may motivate some that for every hurdle ahead take back a step then leap forward, outraged, till you achieve your destination.

The sands may be a place for building castles, “digging in” people for fun or writing one’s name .. but different sands have different meanings to life. To face a stronger opponent, life gradually teaches us to become hard-core yet humble for every situation. If you observe, standing just near the shore, the grains of the sand harden yet remain wet as they face the vast force of the sea. It hardly allows anyone to penetrate deep into it, yet it permits long, beautiful walks to remember. Here is where the Castle’s are built and here is where the childhood memories are made. The faraway sand is rather fine and endures the tough sun beams. It may be some enjoyment for the love of people, but eventually it wears off.
sand-sunset

 

Horizons may become hope for lost souls. Endlessly expanding beneath, yet touching the skies in its limits. The bewildered colors and the beautiful birds echoing a lesson-“don’t give up here, life is awesome ahead- there is hope!” For some, the horizon has even heard the deepest secrets- shared or unshared stories. Some remember, some forgotten.

Did you ever experience the underwater ? A world of stingrays, groupers, sea-turtles, sharks, clown-fishes and much more. A hiding place for beautiful pearls. A scenary of Divine artwork. A treasure of cities beneath it, many still undiscovered. Another lesson for us- apparently, someone may be a villain person yet the heart and soul they possess could be beautiful. We judge people easily by appearance, but what lies within them might astonish us and inspire us.

That being said, its always a pleasure visiting sea side. The next time you go to create memories, look for astounding lessons as it might teach for a lifetime to remember and share with your kids and grandkids.

As for me, I always leave making sure that I leave my mark and depart, with sticky sand still between my toes and an ice cream in one hand. 🙂

The ‘Diapaused’ Human

Just a mere stage of dormancy. A phase in every insect’s life and some mammals where they have to survive in unfavourable conditions- clinging onto their dear life- and then develop to a mature adult form. This is the diapause. Like a Caterpillar goes dormant and for some time this gloomy little one doesn’t know what would happen next.. until it turns to a beautiful butterfly- blessed with a superpower.. Wings! Likewise, us humans also go through a stage of diapause- ironically it occurs many times till we mature and realize it later that we changed.
12376147_1511545419140640_4359244333748415401_n

 

We humans endure pain, tolerate criticism, get bad at relations and often feel so much that we get paralyzed for our next move. These thoughts or events that make us so numb are just temporary tests in our life that if we ponder are actually shaping us into an ‘adult’ form. This is the diapause in every human life. These tests may be a career option, a problematic subject, a mere opinion from a passerby or friend or even another human. It maybe a long dormant period in the life of someone who faces demise of a loved one. It may be a deadly disease. It may even be a villian in a family. Its altogether just a pause where us humans tend to really think about life- the purpose, what and how will it further take us and how shall we deal with it. We humans err and realize mistakes, but err again.

Cheeers! There are always two choices. Either to take  U-turn and respond back at life as crudely as it made us fall, or succumb to your problems and get all gloomy about the life again. I have seen people at tender age of 10 talking wisely like a 25 year old ambitious person, and I have also witnessed 50 year olds pretending going back on 16 years of age. To your surprise, there are people who often think too seriously positive about this diapaise that they often get so matured the opinions of someone else always negates them, eventually they feel all alone and  the diapause stage comes back. This is a vicious cycle we should refrain from. Maturity sure doesn’t define age, yet it takes years or a mere event in a life of an individual to outgrow thoughts and opinions. To reason differently yet act naturally.

When I say we got two choices, I also say we got a positive expectation and a negative one. But this is not entirely from oneself, its actually from Allah SWT. When we accept the fact the diapause is a checkpoint created by Allah SWT to make us reckon life, we know if He made us reach to it He would also make us go through it. This is our superpower I mentioned above, a power to trust Him in every decision He makes.

So, the next time you face a diapause, repeat the ayaah from Quran,

“With every hardship is an ease, Verily, with every hardship is an ease”

Then ask yourself and ponder where  is the ease and you shall smile back again. 🙂